زلف لہرا کے فضا پہلے معطر کر دے

صدا انبالوی

زلف لہرا کے فضا پہلے معطر کر دے

صدا انبالوی

MORE BYصدا انبالوی

    زلف لہرا کے فضا پہلے معطر کر دے

    جام پھر آنکھوں کے مے خانے سے بھر بھر کر دے

    بجھ گئی شمع کی لو تیرے دوپٹے سے تو کیا

    اپنی مسکان سے محفل کو منور کر دے

    ہوش تو اڑ گئے آنکھوں سے ہی پی کر ساقی

    اب ذرا وہ بھی پلا دے جو گلا تر کر دے

    غیر کو منہ نہ لگا ہوش میں ہوں جب تک میں

    اتنا احسان مرے ساقیا مجھ پر کر دے

    بے مروت ہیں بڑے پی کے بھی ہیں ہوش میں جو

    ایسے مے خواروں کو مے خانے سے باہر کر دے

    شعر میں ساتھ روانی کے معانی بھی تو بھر

    اے صداؔ قید تو کوزے میں سمندر کر دے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY