فلموں میں شاعری


آپ دیکھ رہے ہیں

سیکشن سے ویڈیو

فلمی غزلیں

عنوان
 
 
 
 
 
 
 
 
 
Ai dil mujhe aisi jagah le chal
Ai dil mujhe aisi jagah le chal
c
c
c
c
c
c
c
c
c
Dil chiz kya hai aap meri jaan lijiye
ek shahenshah ne banwa ke hasi.n taj mahal
Ganga Jamuna Eid Milan Mushaira
Ganga Jamuna Eid Milan Mushaira
Hoshwalon ko khabar kya bekhudi kya cheez hai
In aankhon ki masti ke
ishq ki garmi-e-jazbaat kise pesh karoon
Jurm-E-Ulfat Pe Hamen Log Saza Dete Hain
Kabhi khud pe kabhi haalaat pe rona aaya
Karoge yaad to har baat yaad aayegi
khaali haath shaam aayi hai
Khuda ka shukr sahare baghair beet gai
Khuda ka shukr sahare baghair beet gai
Khudi Ka Sirr-E-Niha by Shafqat Amanat Ali & Sanam Marvi
Koi saaghar dil ko behlaata nahin
Koi ye kaise bataye (Movie- Arth) written by Kaifi Azmi
Phir chhidi raat baat phulon ki
Rang aur noor ki baaraat kise pesh karun
ruke ruke se qadam
Shaam-e-gham ki qasam
tamaam umr tiraa intizaar ham ne kiyaa
Tumko dekhta to ye khayal aaya
Uthaye ja unke sitam aur jiye ja
Wo kaghaz ki kashti wo barish ka pani
Zinda hoon is tarah ki gham-e-zindagi nahin
آپ کی یاد آتی رہی رات بھر
آپ کی یاد آتی رہی رات بھر
آج جانے کی ضد نہ کرو
آدمی نامہ
اس بھری دنیا میں کوئی بھی ہمارا نہ ہوا
ان کو یہ شکایت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے
آہ کو چاہئے اک عمر اثر ہوتے تک
آوارہ
اے عشق یہ سب دنیا والے بیکار کی باتیں کرتے ہیں
اے محبت ترے انجام پہ رونا آیا
بنجارہ نامہ
پتا پتا بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے
پھر مجھے دیدۂ تر یاد آیا
تاج محل
تم اتنا جو مسکرا رہے ہو
تنگ آ چکے ہیں کشمکش زندگی سے ہم
جب جب تمہیں بھلایا تم اور یاد آئے
جستجو جس کی تھی اس کو تو نہ پایا ہم نے
جھکی جھکی سی نظر بے قرار ہے کہ نہیں
چپکے چپکے رات دن آنسو بہانا یاد ہے
چہرے پہ خوشی چھا جاتی ہے آنکھوں میں سرور آ جاتا ہے
خوبصورت موڑ
دل ناداں تجھے ہوا کیا ہے
دیواروں سے مل کر رونا اچھا لگتا ہے
رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو
زندگی جب بھی تری بزم میں لاتی ہے ہمیں
سرکتی جائے ہے رخ سے نقاب آہستہ آہستہ
سنا ہے لوگ اسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں
سینے میں جلن آنکھوں میں طوفان سا کیوں ہے
شمشیر برہنہ مانگ غضب بالوں کی مہک پھر ویسی ہی
عجیب سانحہ مجھ پر گزر گیا یارو
عشق مجھ کو نہیں وحشت ہی سہی
فقیرانہ آئے صدا کر چلے
کبھی اے حقیقت منتظر نظر آ لباس مجاز میں
کبھی کبھی
کبھی کسی کو مکمل جہاں نہیں ملتا
کبھی نیکی بھی اس کے جی میں گر آ جائے ہے مجھ سے
کس طرح جیتے ہیں یہ لوگ بتا دو یارو
کسی کی یاد میں دنیا کو ہیں بھلائے ہوئے
کسے معلوم تھا اک دن محبت بے زباں ہوگی
کہیں سے موت کو لاؤ کہ غم کی رات کٹے
لگتا نہیں ہے دل مرا اجڑے دیار میں
لگتا نہیں ہے دل مرا اجڑے دیار میں
مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ
محبت ترک کی میں نے گریباں سی لیا میں نے
مری داستاں مجھے ہی مرا دل سنا کے روئے
مکان
نکتہ چیں ہے غم دل اس کو سنائے نہ بنے
نہ جھٹکو زلف سے پانی یہ موتی ٹوٹ جائیں گے
نہ کسی کی آنکھ کا نور ہوں نہ کسی کے دل کا قرار ہوں
ہاتھ چھوٹیں بھی تو رشتے نہیں چھوڑا کرتے
ہم ہیں متاع کوچہ و بازار کی طرح
یارو مجھے معاف رکھو میں نشے میں ہوں
یہ دل یہ پاگل دل مرا کیوں بجھ گیا آوارگی
یہ زلف اگر کھل کے بکھر جائے تو اچھا
seek-warrow-warrow-eseek-e1 - 100 of 103 items