آدمی آدمی سے ملتا ہے

جگر مراد آبادی

آدمی آدمی سے ملتا ہے

جگر مراد آبادی

MORE BY جگر مراد آبادی

    آدمی آدمی سے ملتا ہے

    دل مگر کم کسی سے ملتا ہے

    بھول جاتا ہوں میں ستم اس کے

    وہ کچھ اس سادگی سے ملتا ہے

    آج کیا بات ہے کہ پھولوں کا

    رنگ تیری ہنسی سے ملتا ہے

    سلسلہ فتنۂ قیامت کا

    تیری خوش قامتی سے ملتا ہے

    مل کے بھی جو کبھی نہیں ملتا

    ٹوٹ کر دل اسی سے ملتا ہے

    کاروبار جہاں سنورتے ہیں

    ہوش جب بے خودی سے ملتا ہے

    روح کو بھی مزا محبت کا

    دل کی ہم سائیگی سے ملتا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عابدہ پروین

    عابدہ پروین

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    آدمی آدمی سے ملتا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY