آگاہ اپنی موت سے کوئی بشر نہیں

حیرت الہ آبادی

آگاہ اپنی موت سے کوئی بشر نہیں

حیرت الہ آبادی

MORE BYحیرت الہ آبادی

    آگاہ اپنی موت سے کوئی بشر نہیں

    سامان سو برس کا ہے پل کی خبر نہیں

    آ جائیں رعب غیر میں ہم وہ بشر نہیں

    کچھ آپ کی طرح ہمیں لوگوں کا ڈر نہیں

    اک تو شب فراق کے صدمے ہیں جاں گداز

    اندھیر اس پہ یہ ہے کہ ہوتی سحر نہیں

    کیا کہئے اس طرح کے تلون مزاج کو

    وعدے کا ہے یہ حال ادھر ہاں ادھر نہیں

    رکھتے قدم جو وادئ الفت میں بے دھڑک

    حیرتؔ سوا تمہارے کسی کا جگر نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    آگاہ اپنی موت سے کوئی بشر نہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY