آہ بے اثر نکلی نالہ نارسا نکلا

عزیز قیسی

آہ بے اثر نکلی نالہ نارسا نکلا

عزیز قیسی

MORE BYعزیز قیسی

    آہ بے اثر نکلی نالہ نارسا نکلا

    اک خدا پہ تکیہ تھا وہ بھی آپ کا نکلا

    کاش وہ مریض غم یہ بھی دیکھتا عالم

    چارہ گر یہ کیا گزری درد جب دوا نکلا

    اہل خیر ڈوبے تھے نیکیوں کی مستی میں

    جو خراب صہبا تھا بس وہ پارسا نکلا

    خضر جان کر ہم نے جس سے راہ پوچھی تھی

    آ کے بیچ جنگل میں کیا بتائیں کیا نکلا

    گر گیا اندھیرے میں تیرے مہر کا سورج

    درد کے سمندر سے چاند یاد کا نکلا

    عشق کیا ہوس کیا ہے بندش نفس کیا ہے

    سب سمجھ میں آیا ہے تو جو بے وفا نکلا

    جس نے دی صدا تم کو شمع بن کے ظلمت میں

    رہ گزیدگاں دیکھو کس کا نقش پا نکلا

    اک نوائے رفتہ کی بازگشت تھی قیسیؔ

    دل جسے سمجھتے تھے دشت بے صدا نکلا

    مآخذ
    • کتاب : Sher-o-Hikmat (Pg. 865)
    • Author : Shahryar, Mughni, Tabassum
    • مطبع : Maktaba-e-Sher-O-Hikmat (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY