آئینہ کبھی قابل دیدار نہ ہووے

عشق اورنگ آبادی

آئینہ کبھی قابل دیدار نہ ہووے

عشق اورنگ آبادی

MORE BYعشق اورنگ آبادی

    آئینہ کبھی قابل دیدار نہ ہووے

    گر خاک کے ساتھ اس کو سروکار نہ ہووے

    کیا خاک کہو اس میں تجلی ہو نمایاں

    خورشید کا جو ذرہ پرستار نہ ہووے

    گر مہر نہ ہو داغ کے الفت کی گواہی

    منظور مرے درد کا طومار نہ ہووے

    دل خواب کی غفلت سے مبادا کہیں چونکے

    یہ فتنۂ خوابیدہ ہی بیدار نہ ہووے

    عشق اہل وفا بیچ اسے قدر ہے کیا خاک

    وہ دل کہ جو گرد رہ دل دار نہ ہووے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY