آئنے میں عکس کھلتا ہے گل حیرت نہیں

غلام حسین ساجد

آئنے میں عکس کھلتا ہے گل حیرت نہیں

غلام حسین ساجد

MORE BY غلام حسین ساجد

    آئنے میں عکس کھلتا ہے گل حیرت نہیں

    لوگ سچ کہتے ہیں آنکھوں سی کوئی نعمت نہیں

    اب بہر صورت سر میداں اترنا ہے مجھے

    کارزار عشق سے پسپائی کی صورت نہیں

    اس کے ہونے سے ہوئی ہے اپنے ہونے کی خبر

    کوئی دشمن سے زیادہ لائق عزت نہیں

    سیر کرنا چاہتا ہوں میں جہاں آباد کی

    اور رک کر دیکھ لینے کی مجھے فرصت نہیں

    عشق پر فائز ہوں اوروں کی طرح لیکن مجھے

    وصل کا لپکا نہیں ہے ہجر سے وحشت نہیں

    رات وہ آنسو بہائے ہیں کہ میرے قلب پر

    صبح کا آغوش وا کرنا مری اجرت نہیں

    جس قدر مہمیز کرتا ہوں میں ساجدؔ وقت کو

    اس قدر بے صبر رہنے کی اسے عادت نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Quarterly TASTEER Lahore (Pg. 162)
    • Author : Naseer Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.-1,1st Floor, Awan Plaza, Shadman Market, Lahore (Issue No. 5,6 April To Sep. 1998)
    • اشاعت : Issue No. 5,6 April To Sep. 1998

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY