آج آئینے میں جو کچھ بھی نظر آتا ہے

غلام حسین ساجد

آج آئینے میں جو کچھ بھی نظر آتا ہے

غلام حسین ساجد

MORE BYغلام حسین ساجد

    آج آئینے میں جو کچھ بھی نظر آتا ہے

    اس کے ہونے پہ یقیں بار دگر آتا ہے

    ذہن و دل کرتا ہوں جب رنج جہاں سے خالی

    کوئی بے طرح مری روح میں در آتا ہے

    گفتگو کرتے ہوئے جاتے ہیں پھولوں کے گروہ

    اور چپکے سے درختوں پہ ثمر آتا ہے

    بچ نکلنے پہ مرے خوش نہیں وہ جان بہار

    کوئی الزام مکرر مرے سر آتا ہے

    لوٹ جانے کی اجازت نہیں دوں گا اس کو

    کوئی اب میرے تعاقب میں اگر آتا ہے

    میری آنکھیں بھی میسر نہیں آتیں مجھ کو

    جب ملاقات کو وہ خواب سحر آتا ہے

    میری قسمت ہے یہ آوارہ خرامی ساجدؔ

    دشت کو راہ نکلتی ہے نہ گھر آتا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : shab khuun (rekhta website)(31) (Pg. 27)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY