اب کیا بتاؤں میں ترے ملنے سے کیا ملا

سیماب اکبرآبادی

اب کیا بتاؤں میں ترے ملنے سے کیا ملا

سیماب اکبرآبادی

MORE BYسیماب اکبرآبادی

    اب کیا بتاؤں میں ترے ملنے سے کیا ملا

    عرفان غم ہوا مجھے اپنا پتا ملا

    جب دور تک نہ کوئی فقیر آشنا ملا

    تیرا نیاز مند ترے در سے جا ملا

    منزل ملی مراد ملی مدعا ملا

    سب کچھ مجھے ملا جو ترا نقش پا ملا

    خود بین و خود شناس ملا خود نما ملا

    انساں کے بھیس میں مجھے اکثر خدا ملا

    سرگشتۂ جمال کی حیرانیاں نہ پوچھ

    ہر ذرے کے حجاب میں اک آئنہ ملا

    پایا تجھے حدود تعین سے ماورا

    منزل سے کچھ نکل کے ترا راستہ ملا

    کیوں یہ خدا کے ڈھونڈنے والے ہیں نامراد

    گزرا میں جب حدود خودی سے خدا ملا

    یہ ایک ہی تو نعمت انساں نواز تھی

    دل مجھ کو مل گیا تو خدائی کو کیا ملا

    یا زخم دل کو چھیل کے سینے سے پھینک دے

    یا اعتراف کر کہ نشان وفا ملا

    سیمابؔ کو شگفتہ نہ دیکھا تمام عمر

    کم بخت جب ملا ہمیں غم آشنا ملا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ایم کلیم

    ایم کلیم

    مآخذ
    • کتاب : Intekhab-e-Sukhan(Jild-2) (Pg. 242)
    • Author : Hasrat Mohani
    • مطبع : uttar pradesh urdu academy (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY