اگرچہ زور ہواؤں نے ڈال رکھا ہے

احمد فراز

اگرچہ زور ہواؤں نے ڈال رکھا ہے

احمد فراز

MORE BY احمد فراز

    اگرچہ زور ہواؤں نے ڈال رکھا ہے

    مگر چراغ نے لو کو سنبھال رکھا ہے

    محبتوں میں تو ملنا ہے یا اجڑ جانا

    مزاج عشق میں کب اعتدال رکھا ہے

    ہوا میں نشہ ہی نشہ فضا میں رنگ ہی رنگ

    یہ کس نے پیرہن اپنا اچھال رکھا ہے

    بھلے دنوں کا بھروسا ہی کیا رہیں نہ رہیں

    سو میں نے رشتۂ غم کو بحال رکھا ہے

    ہم ایسے سادہ دلوں کو وہ دوست ہو کہ خدا

    سبھی نے وعدۂ فردا پہ ٹال رکھا ہے

    حساب لطف حریفاں کیا ہے جب تو کھلا

    کہ دوستوں نے زیادہ خیال رکھا ہے

    بھری بہار میں اک شاخ پر کھلا ہے گلاب

    کہ جیسے تو نے ہتھیلی پہ گال رکھا ہے

    فرازؔ عشق کی دنیا تو خوبصورت تھی

    یہ کس نے فتنۂ ہجر و وصال رکھا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    احمد فراز

    احمد فراز

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY