اے دوست درد دل کا مداوا کیا نہ جائے

حمید جالندھری

اے دوست درد دل کا مداوا کیا نہ جائے

حمید جالندھری

MORE BYحمید جالندھری

    اے دوست درد دل کا مداوا کیا نہ جائے

    وعدہ اگر کیا ہے تو ایفا کیا نہ جائے

    آنے لگے ہیں وہ بھی عیادت کے واسطے

    اے چارہ گر مریض کو اچھا کیا نہ جائے

    مجبوریوں کے راز نہ کھل جائیں بعد مرگ

    قاتل ہمارے قتل کا چرچا کیا نہ جائے

    آئے گی اپنے لب پہ تو ہوگی پرائی بات

    لازم ہے راز دل کبھی افشا کیا نہ جائے

    وہ خود ہی جان لیں گے مرے دل کا مدعا

    بہتر یہی ہے عرض تمنا کیا نہ جائے

    مآخذ :
    • کتاب : Shaam e Sehra (Pg. 159)
    • Author : Hameed Jalandhari
    • مطبع : Maktaba Karwaan, Lahore (1975)
    • اشاعت : 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY