عکس کو پھول بنانے میں گزر جاتی ہے

اشفاق ناصر

عکس کو پھول بنانے میں گزر جاتی ہے

اشفاق ناصر

MORE BYاشفاق ناصر

    عکس کو پھول بنانے میں گزر جاتی ہے

    زندگی آئنہ خانے میں گزر جاتی ہے

    شام ہوتی ہے تو لگتا ہے کوئی روٹھ گیا

    اور شب اس کو منانے میں گزر جاتی ہے

    ہر محبت کے لیے دل میں الگ خانہ ہے

    ہر محبت اسی خانے میں گزر جاتی ہے

    زندگی بوجھ بتاتا تھا بتانے والا

    یہ تو بس ایک بہانے میں گزر جاتی ہے

    تو بتا آنکھ نیا خواب کہاں سے دیکھے

    روز شب تجھ کو بھلانے میں گزر جاتی ہے

    وہ چلا جاتا ہے اور ساعت رخصت اشفاقؔ

    جسم کا بوجھ اٹھانے میں گزر جاتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY