ہے بھی اور پھر نظر نہیں آتی

انور دہلوی

ہے بھی اور پھر نظر نہیں آتی

انور دہلوی

MORE BY انور دہلوی

    ہے بھی اور پھر نظر نہیں آتی

    دھیان میں وہ کمر نہیں آتی

    مانگتا ہوں مگر نہیں آتی

    یہ اجل وقت پر نہیں آتی

    تیرے کشتوں کا روز حشر حساب

    غیرت او فتنہ گر نہیں آتی

    طبع اپنی بھی ایک آندھی ہے

    خاک اڑانی مگر نہیں آتی

    ابر کس کس طرح برستا ہے

    شرم اے چشم تر نہیں آتی

    تم تو یوں محو ظلم ہو کہ ہمیں

    آہ کرنی مگر نہیں آتی

    نذر کچھ کر کے دل کو لے کہ یہ جنس

    مفت اے مفت بر نہیں آتی

    مختصر حال درد دل یہ ہے

    موت اے چارہ گر نہیں آتی

    یا رب آباد کوئے یار رہے

    کہ قیامت ادھر نہیں آتی

    نیند کا کام گرچہ آنا ہے

    میری آنکھوں میں پر نہیں آتی

    بے طرح پڑتی ہے نظر ان کی

    خیر دل کی نظر نہیں آتی

    بے پری نے اڑا رکھا ہے مجھے

    حسرت بال و پر نہیں آتی

    سب کچھ آتا ہے تو نہیں آتا

    گر وفا سیم بر نہیں آتی

    اپنی اس آرزو کو کیا کوسوں

    آب وہاں تیغ پر نہیں آتی

    جان دینی تو ہم کو آتی ہے

    دل کو تسکین اگر نہیں آتی

    غیر کچھ مانگتا ہے دیکھیں تو

    ہے تمہیں کس قدر نہیں آتی

    دل کی اپنے جگر پہ لوں لیکن

    ایک کی ایک پر نہیں آتی

    دشمن اور اک نگہ میں لوٹ نہ جائے

    چوٹ پوری مگر نہیں آتی

    تیرا کوچہ ہے مصر نظارہ

    کہ پلٹ کر نظر نہیں آتی

    ان کا آنا تو ایک آنا ہے

    موت بھی وقت پر نہیں آتی

    انورؔ اس شب کی دیکھ لو تاخیر

    صبح ہوتی نظر نہیں آتی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY