اپنی تو کوئی بات بنائے نہیں بنی

بلقیس ظفیر الحسن

اپنی تو کوئی بات بنائے نہیں بنی

بلقیس ظفیر الحسن

MORE BYبلقیس ظفیر الحسن

    اپنی تو کوئی بات بنائے نہیں بنی

    کچھ ہم نہ کہہ سکے تو کچھ اس نے نہیں سنی

    یوں تو چہار سمت ہے اپنے حصار شب

    ہم تیرگی کو چھید کے لاتے ہیں روشنی

    نادیدہ منظروں سے تراشے ہیں خواب زار

    کب در خور نگہ کوئی منظر ہے دیدنی

    اوچھا تھا وار اس کا مگر ہم نہ بچ سکے

    کسی زہر میں بجھائی تھی اس شخص نے انی

    ہر دل عزیز وہ بھی ہے ہم بھی ہیں خوش مزاج

    اب کیا بتائیں کیسے ہماری نہیں بنی

    اوروں کی طرح ہم بھی مگر جھیل جائیں گے

    سب زندگی سمجھتے ہیں جس کو وہ جاں کنی

    بلقیسؔ اپنی بات تو سب سے الگ رہی

    ناگفتنی سنی ہے کہی ناشنیدنی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے