اپنی اجڑی ہوئی دنیا کی کہانی ہوں میں

اختر انصاری

اپنی اجڑی ہوئی دنیا کی کہانی ہوں میں

اختر انصاری

MORE BYاختر انصاری

    اپنی اجڑی ہوئی دنیا کی کہانی ہوں میں

    ایک بگڑی ہوئی تصویر جوانی ہوں میں

    آگ بن کر جو کبھی دل میں نہاں رہتا تھا

    آج دنیا میں اسی غم کی نشانی ہوں میں

    ہائے کیا قہر ہے مرحوم جوانی کی یاد

    دل سے کہتی ہے کہ خنجر کی روانی ہوں میں

    عالم افروز تپش تیرے لیے لایا ہوں

    اے غم عشق ترا عہد جوانی ہوں میں

    چرخ ہے نغمہ گر ایام ہیں نغمے اخترؔ

    داستاں گو ہے غم دہر کہانی ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY