عقل گو آستاں سے دور نہیں

علامہ اقبال

عقل گو آستاں سے دور نہیں

علامہ اقبال

MORE BYعلامہ اقبال

    دلچسپ معلومات

    ( بال جبریل)

    عقل گو آستاں سے دور نہیں

    اس کی تقدیر میں حضور نہیں

    دل بینا بھی کر خدا سے طلب

    آنکھ کا نور دل کا نور نہیں

    علم میں بھی سرور ہے لیکن

    یہ وہ جنت ہے جس میں حور نہیں

    کیا غضب ہے کہ اس زمانے میں

    ایک بھی صاحب سرور نہیں

    اک جنوں ہے کہ با شعور بھی ہے

    اک جنوں ہے کہ با شعور نہیں

    ناصبوری ہے زندگی دل کی

    آہ وہ دل کہ ناصبور نہیں

    بے حضوری ہے تیری موت کا راز

    زندہ ہو تو تو بے حضور نہیں

    ہر گہر نے صدف کو توڑ دیا

    تو ہی آمادۂ ظہور نہیں

    ارنی میں بھی کہہ رہا ہوں مگر

    یہ حدیث کلیم و طور نہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY