اسرار عشق ہے دل مضطر لیے ہوئے

اصغر گونڈوی

اسرار عشق ہے دل مضطر لیے ہوئے

اصغر گونڈوی

MORE BYاصغر گونڈوی

    اسرار عشق ہے دل مضطر لیے ہوئے

    قطرہ ہے بے قرار سمندر لیے ہوئے

    آشوب دہر و فتنۂ محشر لیے ہوئے

    پہلو میں یعنی ہو دل مضطر لیے ہوئے

    موج نسیم صبح کے قربان جائیے

    آئی ہے بوئے زلف معنبر لیے ہوئے

    کیا مستیاں چمن میں ہیں جوش بہار سے

    ہر شاخ گل ہے ہاتھ میں ساغر لیے ہوئے

    قاتل نگاہ یاس کی زد سے نہ بچ سکا

    خنجر تھے ہم بھی اک تہ خنجر لیے ہوئے

    خیرہ کیے ہے چشم حقیقت شناس بھی

    ہر ذرہ ایک مہر منور لیے ہوئے

    پہلی نظر بھی آپ کی اف کس بلا کی تھی

    ہم آج تک وہ چوٹ ہیں دل پر لیے ہوئے

    تصویر ہے کھنچی ہوئی ناز و نیاز کی

    میں سر جھکائے اور وہ خنجر لیے ہوئے

    صہبائے تند و تیز کو ساقی سنبھالنا

    اچھلے کہیں نہ شیشہ و ساغر لیے ہوئے

    میں کیا کہوں کہاں ہے محبت کہاں نہیں

    رگ رگ میں دوڑی پھرتی ہے نشتر لیے ہوئے

    نام ان کا آ گیا کہیں ہنگام باز پرس

    ہم تھے کہ اڑ گئے صف محشر لیے ہوئے

    اصغرؔ حریم عشق میں ہستی ہی جرم ہے

    رکھنا کبھی نہ پاؤں یہاں سر لیے ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY