بروز حشر مرے ساتھ دل لگی ہی تو ہے

فاروق بانسپاری

بروز حشر مرے ساتھ دل لگی ہی تو ہے

فاروق بانسپاری

MORE BYفاروق بانسپاری

    بروز حشر مرے ساتھ دل لگی ہی تو ہے

    کہ جیسے بات کوئی آپ سے چھپی ہی تو ہے

    نہ چھیڑو بادہ کشو مے کدے میں واعظ کو

    بہک کے آ گیا بیچارہ آدمی ہی تو ہے

    قصور ہو گیا قدموں پہ لوٹ جانے کا

    برا نہ مانیئ سرکار بے خودی ہی تو ہے

    ریاض خلد کا اتنا بڑھا چڑھا کے بیاں

    کہ جیسے وہ مرے محبوب کی گلی ہی تو ہے

    یقیں مجھے بھی ہے وہ آئیں گے ضرور مگر

    وفا کرے گی کہاں تک کہ زندگی ہی تو ہے

    مرے بغیر اندھیرا تمہیں ستائے گا

    سحر کو شام بنا دے گی عاشقی ہی تو ہے

    بہ چشم نم تری درگاہ سے گیا فاروقؔ

    خطا معاف کہ یہ بندہ پروری ہی تو ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بروز حشر مرے ساتھ دل لگی ہی تو ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY