بعد سورج کے بھی ہم کو زندگی اچھی لگی

علینا عترت

بعد سورج کے بھی ہم کو زندگی اچھی لگی

علینا عترت

MORE BYعلینا عترت

    بعد سورج کے بھی ہم کو زندگی اچھی لگی

    شب کی فطرت میں تھی جو اک بیکلی اچھی لگی

    پہلے پہلے کچھ ہراساں سے تھے ہم تنہائی سے

    چاند تارے آ گئے پھر خامشی اچھی لگی

    بندشوں کو توڑنے کی کوششیں کرتی ہوئی

    سر پٹکتی لہر تیری عاجزی اچھی لگی

    رات بھر شبنم کے ہاتھوں بن سنور جانے کے بعد

    پھول کے چہرے پہ بکھری تازگی اچھی لگی

    اس کے شعروں میں محبت کے سوا کچھ بھی نہ تھا

    پر علیناؔ کو یہی دیوانگی اچھی لگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY