بارود کے بدلے ہاتھوں میں آ جائے کتاب تو اچھا ہو

غلام محمد قاصر

بارود کے بدلے ہاتھوں میں آ جائے کتاب تو اچھا ہو

غلام محمد قاصر

MORE BY غلام محمد قاصر

    بارود کے بدلے ہاتھوں میں آ جائے کتاب تو اچھا ہو

    اے کاش ہماری آنکھوں کا اکیسواں خواب تو اچھا ہو

    ہر پتا نا آسودہ ہے ماحول چمن آلودہ ہے

    رہ جائیں لرزتی شاخوں پر دو چار گلاب تو اچھا ہو

    یوں شور کا دریا بپھرا ہے چڑیوں نے چہکنا چھوڑ دیا

    خطرے کے نشان سے نیچے اب اترے سیلاب تو اچھا ہو

    ہر سال کی آخری شاموں میں دو چار ورق اڑ جاتے ہیں

    اب اور نہ بکھرے رشتوں کی بوسیدہ کتاب تو اچھا ہو

    ہر بچہ آنکھیں کھولتے ہی کرتا ہے سوال محبت کا

    دنیا کے کسی گوشے سے اسے مل جائے جواب تو اچھا ہو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بارود کے بدلے ہاتھوں میں آ جائے کتاب تو اچھا ہو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY