بدن چراتے ہوئے روح میں سمایا کر

ساقی فاروقی

بدن چراتے ہوئے روح میں سمایا کر

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    بدن چراتے ہوئے روح میں سمایا کر

    میں اپنی دھوپ میں سویا ہوا ہوں سایا کر

    یہ اور بات کہ دل میں گھنا اندھیرا ہے

    مگر زبان سے تو چاندنی لٹایا کر

    چھپا ہوا ہے تری عاجزی کے ترکش میں

    انا کے تیر اسی زہر میں بجھایا کر

    کوئی سبیل کہ پیاسے پناہ مانگتے ہیں

    سفر کی راہ میں پرچھائیاں بچھایا کر

    خدا کے واسطے موقع نہ دے شکایت کا

    کہ دوستی کی طرح دشمنی نبھایا کر

    عجب ہوا کہ گرہ پڑ گئی محبت میں

    جو ہو سکے تو جدائی میں راس آیا کر

    نئے چراغ جلا یاد کے خرابے میں

    وطن میں رات سہی روشنی منایا کر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بدن چراتے ہوئے روح میں سمایا کر نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY