بہار آئی گلوں کو ہنسی نہیں آئی

کالی داس گپتا رضا

بہار آئی گلوں کو ہنسی نہیں آئی

کالی داس گپتا رضا

MORE BY کالی داس گپتا رضا

    بہار آئی گلوں کو ہنسی نہیں آئی

    کہیں سے بو تری گفتار کی نہیں آئی

    کچھ اور وجہ ہے کم ہو گئی ہے لذت جام

    ہماری پیاس میں کوئی کمی نہیں آئی

    یہ کائنات سب آغوش نیم شب میں ہے

    زمانہ ہو گیا آواز ہی نہیں آئی

    دل اک درخت زمیں بوس باد و باراں سے

    رتیں گزر گئیں کونپل نئی نہیں آئی

    نہ جانے کیسی گھڑی سے گزر رہے تھے ہم

    کہ جاگتے نہ رہے نیند بھی نہیں آئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY