بہت کم بولنا اب کر دیا ہے

شمس تبریزی

بہت کم بولنا اب کر دیا ہے

شمس تبریزی

MORE BYشمس تبریزی

    بہت کم بولنا اب کر دیا ہے

    کئی موقعوں پہ غصہ بھی پیا ہے

    تم ہم سے پوچھتے ہو کیا کہ ہم نے

    بہت سا کام نظروں سے لیا ہے

    بہت گرمی پڑی اب کے برس بھی

    مئی اور جون مشکل میں جیا ہے

    رفو آنچل پہ تیرے ہے تو سن لے

    گریباں چاک ہم نے بھی سیا ہے

    تمہاری گفتگو بتلا رہی ہے

    کسی سے عشق تم نے بھی کیا ہے

    بہت شیر و شکر ہیں ہم ادب میں

    تو شمسؔ ہم میں کوئی کیا مافیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY