بیٹھے بیٹھے کیسا دل گھبرا جاتا ہے

زہرا نگاہ

بیٹھے بیٹھے کیسا دل گھبرا جاتا ہے

زہرا نگاہ

MORE BYزہرا نگاہ

    بیٹھے بیٹھے کیسا دل گھبرا جاتا ہے

    جانے والوں کا جانا یاد آ جاتا ہے

    بات چیت میں جس کی روانی مثل ہوئی

    ایک نام لیتے میں کچھ رک سا جاتا ہے

    ہنستی بستی راہوں کا خوش باش مسافر

    روزی کی بھٹی کا ایندھن بن جاتا ہے

    دفتر منصب دونوں ذہن کو کھا لیتے ہیں

    گھر والوں کی قسمت میں تن رہ جاتا ہے

    اب اس گھر کی آبادی مہمانوں پر ہے

    کوئی آ جائے تو وقت گزر جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY