بے نام سا یہ درد ٹھہر کیوں نہیں جاتا

ندا فاضلی

بے نام سا یہ درد ٹھہر کیوں نہیں جاتا

ندا فاضلی

MORE BY ندا فاضلی

    بے نام سا یہ درد ٹھہر کیوں نہیں جاتا

    جو بیت گیا ہے وہ گزر کیوں نہیں جاتا

    سب کچھ تو ہے کیا ڈھونڈھتی رہتی ہیں نگاہیں

    کیا بات ہے میں وقت پے گھر کیوں نہیں جاتا

    وہ ایک ہی چہرہ تو نہیں سارے جہاں میں

    جو دور ہے وہ دل سے اتر کیوں نہیں جاتا

    میں اپنی ہی الجھی ہوئی راہوں کا تماشہ

    جاتے ہیں جدھر سب میں ادھر کیوں نہیں جاتا

    وہ خواب جو برسوں سے نہ چہرہ نہ بدن ہے

    وہ خواب ہواؤں میں بکھر کیوں نہیں جاتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    طلعت عزیز

    طلعت عزیز

    نامعلوم

    نامعلوم

    RECITATIONS

    فہد حسین

    فہد حسین

    فہد حسین

    بے نام سا یہ درد ٹھہر کیوں نہیں جاتا فہد حسین

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites