بے کار گئی آڑ ترے پردۂ در کی

شکیل بدایونی

بے کار گئی آڑ ترے پردۂ در کی

شکیل بدایونی

MORE BY شکیل بدایونی

    بے کار گئی آڑ ترے پردۂ در کی

    اللہ رے وسعت مرے آغوش نظر کی

    پی شوق سے واعظ ارے کیا بات ہے ڈر کی

    دوزخ ترے قبضے میں ہے جنت ترے گھر کی

    ایمان کی دولت سے ترے حسن کا سودا

    ایمان کی دولت ہے تری ایک نظر کی

    آ جائے تصور میں کوئی حشر بداماں

    پھر میری شب غم کو ضرورت ہے سحر کی

    وہ سامنے ہیں پھر بھی انہیں ڈھونڈ رہا ہوں

    آخر کوئی حد بھی ہے حجابات نظر کی

    تنہائی فرقت میں جو عالم ہے ادھر کا

    ہنگامۂ محفل میں وہ حالت ہے ادھر کی

    کچھ سہل نہ پائے ہیں محبت کے مراتب

    چھانی ہے بہت خاک تری راہگزر کی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY