مستقل محرومیوں پر بھی تو دل مانا نہیں

احمد فراز

مستقل محرومیوں پر بھی تو دل مانا نہیں

احمد فراز

MORE BYاحمد فراز

    مستقل محرومیوں پر بھی تو دل مانا نہیں

    لاکھ سمجھایا کہ اس محفل میں اب جانا نہیں

    خود فریبی ہی سہی کیا کیجئے دل کا علاج

    تو نظر پھیرے تو ہم سمجھیں کہ پہچانا نہیں

    ایک دنیا منتظر ہے اور تیری بزم میں

    اس طرح بیٹھے ہیں ہم جیسے کہیں جانا نہیں

    جی میں جو آتی ہے کر گزرو کہیں ایسا نہ ہو

    کل پشیماں ہوں کہ کیوں دل کا کہا مانا نہیں

    زندگی پر اس سے بڑھ کر طنز کیا ہوگا فرازؔ

    اس کا یہ کہنا کہ تو شاعر ہے دیوانا نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    مستقل محرومیوں پر بھی تو دل مانا نہیں نعمان شوق

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY