تم کو بھلا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

انجم رہبر

تم کو بھلا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

انجم رہبر

MORE BY انجم رہبر

    تم کو بھلا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

    میں زہر کھا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

    کل میری ایک پیاری سہیلی کتاب میں

    اک خط چھپا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

    اس وقت رات رانی مرے سونے صحن میں

    خوشبو لٹا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

    ایمان جانئے کہ اسے کفر جانئے

    میں سر جھکا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

    کل شام چھت پہ میر تقی میرؔ کی غزل

    میں گنگنا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

    انجمؔ تمہارا شہر جدھر ہے اسی طرف

    اک ریل جا رہی تھی کہ تم یاد آ گئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites