بھیڑ میں جب تک رہتے ہیں جوشیلے ہیں

شارق کیفی

بھیڑ میں جب تک رہتے ہیں جوشیلے ہیں

شارق کیفی

MORE BYشارق کیفی

    بھیڑ میں جب تک رہتے ہیں جوشیلے ہیں

    الگ الگ ہم لوگ بہت شرمیلے ہیں

    خواب کے بدلے خون چکانا پڑتا ہے

    آنکھوں کے یہ کھیل بڑے خرچیلے ہیں

    بینائی بھی کیا کیا دھوکے دیتی ہے

    دور سے دیکھو سارے دریا نیلے ہیں

    صحرا میں بھی گاؤں کا دریا ساتھ رہا

    دیکھو میرے پاؤں ابھی تک گیلے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY