بھولے بسرے ہوئے غم پھر ابھر آتے ہیں کئی

فضیل جعفری

بھولے بسرے ہوئے غم پھر ابھر آتے ہیں کئی

فضیل جعفری

MORE BY فضیل جعفری

    بھولے بسرے ہوئے غم پھر ابھر آتے ہیں کئی

    آئینہ دیکھیں تو چہرے نظر آتے ہیں کئی

    وہ بھی اک شام تھی جب ساتھ چھٹا تھا اس کا

    واہمے دل میں سر شام در آتے ہیں کئی

    پاؤں کی دھول بھی بن جاتی ہے دشمن اپنی

    گھر سے نکلو تو پھر ایسے سفر آتے ہیں کئی

    قریۂ جاں سے گزرنا بھی کچھ آسان نہیں

    راہ میں جعفری شیشے کے گھر آتے ہیں کئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY