بچھڑ کے تجھ سے کسی دوسرے پہ مرنا ہے

اسعد بدایونی

بچھڑ کے تجھ سے کسی دوسرے پہ مرنا ہے

اسعد بدایونی

MORE BY اسعد بدایونی

    بچھڑ کے تجھ سے کسی دوسرے پہ مرنا ہے

    یہ تجربہ بھی اسی زندگی میں کرنا ہے

    ہوا درختوں سے کہتی ہے دکھ کے لہجے میں

    ابھی مجھے کئی صحراؤں سے گزرنا ہے

    میں منظروں کے گھنے پن سے خوف کھاتا ہوں

    فنا کو دست محبت یہاں بھی دھرنا ہے

    تلاش رزق میں دریا کے پنچھیوں کی طرح

    تمام عمر مجھے ڈوبنا ابھرنا ہے

    اداسیوں کے خد و خال سے جو واقف ہو

    اک ایسے شخص کو اکثر تلاش کرنا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بچھڑ کے تجھ سے کسی دوسرے پہ مرنا ہے نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY