بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا

افتخار عارف

بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا

افتخار عارف

MORE BY افتخار عارف

    بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا

    مرے معبود آخر کب تماشا ختم ہوگا

    چراغ حجرۂ درویش کی بجھتی ہوئی لو

    ہوا سے کہہ گئی ہے اب تماشا ختم ہوگا

    کہانی میں نئے کردار شامل ہو گئے ہیں

    نہیں معلوم اب کس ڈھب تماشا ختم ہوگا

    کہانی آپ الجھی ہے کہ الجھائی گئی ہے

    یہ عقدہ تب کھلے گا جب تماشا ختم ہوگا

    زمیں جب عدل سے بھر جائے گی نور علیٰ نور

    بنام مسلک و مذہب تماشا ختم ہوگا

    یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات

    سحر سے پہلے پہلے سب تماشا ختم ہوگا

    تماشا کرنے والوں کو خبر دی جا چکی ہے

    کہ پردہ کب گرے گا کب تماشا ختم ہوگا

    دل نا مطمئن ایسا بھی کیا مایوس رہنا

    جو خلق اٹھی تو سب کرتب تماشا ختم ہوگا

    RECITATIONS

    افتخار عارف

    افتخار عارف

    افتخار عارف

    بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا افتخار عارف

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Favorite added successfully

    Favorite removed successfully