چاہی تھی دل نے تجھ سے وفا کم بہت ہی کم

محبوب خزاں

چاہی تھی دل نے تجھ سے وفا کم بہت ہی کم

محبوب خزاں

MORE BYمحبوب خزاں

    چاہی تھی دل نے تجھ سے وفا کم بہت ہی کم

    شاید اسی لیے ہے گلا کم بہت ہی کم

    کیا حسن تھا کہ آنکھ لگی سایہ ہو گیا

    وہ سادگی کی مار، حیا کم بہت ہی کم

    تھے دوسرے بھی تیری محبت کے آس پاس

    دل کو مگر سکون ملا کم بہت ہی کم

    جلتے سنا چراغ سے دامن ہزار بار

    دامن سے کب چراغ جلا کم بہت ہی کم

    اب روح کانپتی ہے اجل ہے قریب تر

    اے ہم نصیب ناز و ادا کم بہت ہی کم

    یوں مت کہو خزاںؔ کہ بہت دیر ہو گئی

    ہیں آج کل وہ تم سے خفا کم بہت ہی کم

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    محبوب خزاں

    محبوب خزاں

    اعجاز حسین حضروی

    اعجاز حسین حضروی

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 31.10.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY