چلنے کا حوصلہ نہیں رکنا محال کر دیا

پروین شاکر

چلنے کا حوصلہ نہیں رکنا محال کر دیا

پروین شاکر

MORE BYپروین شاکر

    چلنے کا حوصلہ نہیں رکنا محال کر دیا

    عشق کے اس سفر نے تو مجھ کو نڈھال کر دیا

    اے مری گل زمیں تجھے چاہ تھی اک کتاب کی

    اہل کتاب نے مگر کیا ترا حال کر دیا

    ملتے ہوئے دلوں کے بیچ اور تھا فیصلہ کوئی

    اس نے مگر بچھڑتے وقت اور سوال کر دیا

    اب کے ہوا کے ساتھ ہے دامن یار منتظر

    بانوئے شب کے ہاتھ میں رکھنا سنبھال کر دیا

    ممکنہ فیصلوں میں ایک ہجر کا فیصلہ بھی تھا

    ہم نے تو ایک بات کی اس نے کمال کر دیا

    میرے لبوں پہ مہر تھی پر میرے شیشہ رو نے تو

    شہر کے شہر کو مرا واقف حال کر دیا

    چہرہ و نام ایک ساتھ آج نہ یاد آ سکے

    وقت نے کس شبیہ کو خواب و خیال کر دیا

    مدتوں بعد اس نے آج مجھ سے کوئی گلہ کیا

    منصب دلبری پہ کیا مجھ کو بحال کر دیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    پروین شاکر

    پروین شاکر

    پروین شاکر

    پروین شاکر

    RECITATIONS

    صبیحہ خان

    صبیحہ خان

    صبیحہ خان

    چلنے کا حوصلہ نہیں رکنا محال کر دیا صبیحہ خان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY