چراغوں کا گھرانا چل رہا ہے

راحت اندوری

چراغوں کا گھرانا چل رہا ہے

راحت اندوری

MORE BYراحت اندوری

    چراغوں کا گھرانا چل رہا ہے

    ہوا سے دوستانہ چل رہا ہے

    جوانی کی ہوائیں چل رہی ہیں

    بزرگوں کا خزانہ چل رہا ہے

    مری گم گشتگی پر ہنسنے والو

    مرے پیچھے زمانہ چل رہا ہے

    ابھی ہم زندگی سے مل نہ پائے

    تعارف غائبانہ چل رہا ہے

    نئے کردار آتے جا رہے ہیں

    مگر ناٹک پرانا چل رہا ہے

    وہی دنیا وہی سانسیں وہی ہم

    وہی سب کچھ پرانا چل رہا ہے

    زیادہ کیا توقع ہو غزل سے

    میاں بس آب و دانہ چل رہا ہے

    سمندر سے کسی دن پھر ملیں گے

    ابھی پینا پلانا چل رہا ہے

    وہی محشر وہی ملنے کا وعدہ

    وہی بوڑھا بہانا چل رہا ہے

    یہاں اک مدرسہ ہوتا تھا پہلے

    مگر اب کارخانہ چل رہا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    انیس اشفاق

    انیس اشفاق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY