چھٹ گیا ابر شفق کھل گئی تارے نکلے

احمد مشتاق

چھٹ گیا ابر شفق کھل گئی تارے نکلے

احمد مشتاق

MORE BY احمد مشتاق

    چھٹ گیا ابر شفق کھل گئی تارے نکلے

    بند کمروں سے ترے درد کے مارے نکلے

    شاخ پر پنکھڑیاں ہوں کہ پلک پر آنسو

    تیرے دامن کی جھلک دیکھ کے سارے نکلے

    تو اگر پاس نہیں ہے کہیں موجود تو ہے

    تیرے ہونے سے بڑے کام ہمارے نکلے

    تیرے ہونٹوں میری آنکھوں سے نہ بدلی دنیا

    پھر وہی پھول کھلے پھر وہی تارے نکلے

    رہ گئی لاج مری عرض وفا کی مشتاقؔ

    خامشی سے تری کیا کیا نہ اشارے نکلے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY