چھپ کے نظروں سے ان آنکھوں کی فراموش کی راہ

بقا اللہ بقاؔ

چھپ کے نظروں سے ان آنکھوں کی فراموش کی راہ

بقا اللہ بقاؔ

MORE BY بقا اللہ بقاؔ

    چھپ کے نظروں سے ان آنکھوں کی فراموش کی راہ

    اب جو آتا ہے کبھی دل میں تو وہ گوش کی راہ

    آگے جوں اشک وہ رہتا تھا سدا پہلو میں

    کیوں اب اس طفل نے گم کی مری آغوش کی راہ

    کیونکے پونچھے گا وہ آ کر مرے آنسو ہیہات

    کوچے سب اشک سے گل ہیں نہیں پاپوش کی راہ

    بھر سفر نام جپوں گا ترا تو راہ کٹے

    یوں تو طے ہوگی نہ اس رہ رو خاموش کی راہ

    چھوڑ کر کوچۂ مے خانہ طرف مسجد کے

    میں تو دیوانہ نہیں ہوں جو چلوں ہوش کی راہ

    یوں تو آتا نہیں اے کاش مرے گھر کوئی

    پھیرے نشے میں غلط اس بت مے نوش کی راہ

    ڈس گئیں ہائے مرے دل کے تئیں آج بقاؔ

    ناگنیں زلف کی اس سر سے اتر دوش کی راہ

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY