چپ چاپ حبس وقت کے پنجرے میں مر گیا

اطہر ناسک

چپ چاپ حبس وقت کے پنجرے میں مر گیا

اطہر ناسک

MORE BYاطہر ناسک

    چپ چاپ حبس وقت کے پنجرے میں مر گیا

    جھونکا ہوا کا آتے ہی کمرے میں مر گیا

    سورج لحاف اوڑھ کے سویا تمام رات

    سردی سے اک پرندہ دریچے میں مر گیا

    جو ناخدا کو کہہ نہ سکا عمر بھر خدا

    وہ شخص کل انا کے جزیرے میں مر گیا

    ایڈیٹری نے کاٹ دیں تخلیق کی رگیں

    اچھا بھلا ادیب رسالے میں مر گیا

    سورج نے آنسوؤں کی توانائی چھین لی

    شبنم سا شخص دھوپ کے قصبے میں مر گیا

    اس مرتبہ بھی سچی گواہی اسی نے دی

    اس مرتبہ مگر وہ کٹہرے میں مر گیا

    ناسکؔ وہ اپنی ذات میں منزل سے کم نہ تھا

    وہ رہرو حیات جو رستے میں مر گیا

    مآخذ:

    • کتاب : Adab-o-Saqafat International (Pg. 63)
    • Author : Shakeelsarosh
    • مطبع : Misal Publishers Raheem Center Press Market Ameen Pur Bazar, Faisalbad, Pakistan

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY