درد کے پیلے گلابوں کی تھکن باقی رہی

نصیر احمد ناصر

درد کے پیلے گلابوں کی تھکن باقی رہی

نصیر احمد ناصر

MORE BY نصیر احمد ناصر

    درد کے پیلے گلابوں کی تھکن باقی رہی

    جاگتی آنکھوں میں خوابوں کی تھکن باقی رہی

    پانیوں کا جسم سہلاتی رہی پروا مگر

    ٹوٹتے بنتے حبابوں کی تھکن باقی رہی

    دید کی آسودگی میں کون کیسے دیکھتا

    درمیاں کتنے حجابوں کی تھکن باقی رہی

    فلسفے سارے کتابوں میں الجھ کر رہ گئے

    درس گاہوں میں نصابوں کی تھکن باقی رہی

    بارشیں ہوتی رہیں ناصرؔ سمندر کی طرف

    ریگزاروں میں سرابوں کی تھکن باقی رہی

    مآخذ:

    • Book : Quarterly TASTEER Lahore (Pg. 192)
    • Author : Naseer Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.-1,1st Floor, Awan Plaza, Shadman Market, Lahore (Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999)
    • اشاعت : Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY