دست بردار زندگی سے ہوا

کاشف حسین غائر

دست بردار زندگی سے ہوا

کاشف حسین غائر

MORE BYکاشف حسین غائر

    دست بردار زندگی سے ہوا

    اور یہ سودا مری خوشی سے ہوا

    آگہی بھی نہ کر سکی پورا

    جتنا نقصان آگہی سے ہوا

    میں ہوا بھی تو ایک دن روشن

    اپنے اندر کی روشنی سے ہوا

    زندگی میں کسک ضروری تھی

    یہ خلا پر تری کمی سے ہوا

    دل طرفدار ہجر تھا ہی نہیں

    اب ہوا بھی تو بے دلی سے ہوا

    شور جتنا ہے کائنات میں شور

    میرے اندر کی خامشی سے ہوا

    کیسا منصب ہے آدمی کا کہ رب

    جب مخاطب ہوا اسی سے ہوا

    پیڑ ہو یا کہ آدمی غائرؔ

    سر بلند اپنی عاجزی سے ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY