دل دبا جاتا ہے کتنا آج غم کے بار سے

اکبر حیدرآبادی

دل دبا جاتا ہے کتنا آج غم کے بار سے

اکبر حیدرآبادی

MORE BYاکبر حیدرآبادی

    دل دبا جاتا ہے کتنا آج غم کے بار سے

    کیسی تنہائی ٹپکتی ہے در و دیوار سے

    منزل اقرار اپنی آخری منزل ہے اب

    ہم کہ آئے ہیں گزر کر جادۂ انکار سے

    ترجماں تھا عکس اپنے چہرۂ گم گشتہ کا

    اک صدا آتی رہی آئینۂ اسرار سے

    ماند پڑتے جا رہے تھے خواب تصویروں کے رنگ

    رات اترتی جا رہی تھی درد کی دیوار سے

    میں بھی اکبرؔ کرب آگیں جانتا ہوں زیست کو

    منسلک ہے فکر میری فکر شوپنہار سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY