Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

دل ہمارا ہے کہ ہم مائل فریاد نہیں

مرزا محمد ہادی عزیز لکھنوی

دل ہمارا ہے کہ ہم مائل فریاد نہیں

مرزا محمد ہادی عزیز لکھنوی

MORE BYمرزا محمد ہادی عزیز لکھنوی

    دل ہمارا ہے کہ ہم مائل فریاد نہیں

    ورنہ کیا ظلم نہیں کون سی بیداد نہیں

    حسن اک شان الٰہی ہے مگر اے بے مہر

    بے وفائی تو کوئی حسن خداداد نہیں

    سر تربت وہ خموشی پہ مری کہتے ہیں

    مرنے والے تجھے پیمان وفا یاد نہیں

    حسن آراستہ قدرت کا عطیہ ہے مگر

    کیا مرا عشق جگر سوز خدا داد نہیں

    لاکھ پابند‌ علائق نہ رہے کوئی یہاں

    طبع وارستہ مگر فکر سے آزاد نہیں

    باہم آئین وفا رسم محبت کیسی

    وقت اب وہ ہے کہ بندوں کو خدا یاد نہیں

    چشم مخمور وہ ہے کابل غرق مے ناب

    دفتر عشق پہ جب تک کہ مرے صاد نہیں

    پوچھتے کیا ہو تباہی کا فسانہ مجھ سے

    دل برباد کی صورت بھی مجھے یاد نہیں

    ذرے ذرے میں ہے اک عالم معنی پنہاں

    خاک برباد کو سمجھے ہو کہ آباد نہیں

    آپ کہتے ہیں کہ ہے گور غریباں ویراں

    ایسی بستی تو جہاں میں کوئی آباد نہیں

    آنسوؤں کو بھی ذرا دیکھ لے رونے والے

    ان ستاروں میں تو دنیا کوئی آباد نہیں

    حسن خود میں نے کیے آئنے کے سو ٹکڑے

    اب نہ کہنا کہ نگاہیں ستم ایجاد نہیں

    کب خیالات پہ ممکن ہے کسی کا پہرہ

    دل تو آزاد رہا میں اگر آزاد نہیں

    سینہ کاوی کے لیے شرط ہے دل کی ہمت

    ناخن دست جنوں تیشۂ فرہاد نہیں

    بے خودی منزل عرفاں ہے ذرا ہوش میں آ

    ہے خودی کا یہ نتیجہ کہ خدا یاد نہیں

    طبقۂ خاک میں ہے عالم خاموش آباد

    جس کو برباد سمجھتے ہو وہ برباد نہیں

    دل ویراں کی تباہی کی کوئی حد ہے عزیزؔ

    میں سمجھتا ہوں کہ دنیا ابھی آباد نہیں

    مأخذ :
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے