دل کی طرف دماغ سے وہ آنے والا ہے

جمال احسانی

دل کی طرف دماغ سے وہ آنے والا ہے

جمال احسانی

MORE BYجمال احسانی

    دل کی طرف دماغ سے وہ آنے والا ہے

    یہ بھی مکان ہاتھ سے اب جانے والا ہے

    اک لہر اس کی آنکھ میں ہے حوصلہ شکن

    اک رنگ اس کے چہرے پہ بہکانے والا ہے

    یہ کون آنے جانے لگا اس گلی میں اب

    یہ کون میری داستاں دہرانے والا ہے

    دنیا پسند آنے لگی دل کو اب بہت

    سمجھو کہ اب یہ باغ بھی مرجھانے والا ہے

    جو ساعت حسیں تھی وہ روکے نہیں رکی

    یہ لمحہ بھی جمالؔ گزر جانے والا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY