دل کو سکون روح کو آرام آ گیا

جگر مراد آبادی

دل کو سکون روح کو آرام آ گیا

جگر مراد آبادی

MORE BYجگر مراد آبادی

    دل کو سکون روح کو آرام آ گیا

    موت آ گئی کہ دوست کا پیغام آ گیا

    جب کوئی ذکر گردش آیام آ گیا

    بے اختیار لب پہ ترا نام آ گیا

    غم میں بھی ہے سرور وہ ہنگام آ گیا

    شاید کہ دور بادۂ گلفام آ گیا

    دیوانگی ہو عقل ہو امید ہو کہ یاس

    اپنا وہی ہے وقت پہ جو کام آ گیا

    دل کے معاملات میں ناصح شکست کیا

    سو بار حسن پر بھی یہ الزام آ گیا

    صیاد شادماں ہے مگر یہ تو سوچ لے

    میں آ گیا کہ سایہ تہ دام آ گیا

    دل کو نہ پوچھ معرکۂ حسن و عشق میں

    کیا جانیے غریب کہاں کام آ گیا

    یہ کیا مقام عشق ہے ظالم کہ ان دنوں

    اکثر ترے بغیر بھی آرام آ گیا

    احباب مجھ سے قطع تعلق کریں جگرؔ

    اب آفتاب زیست لب بام آ گیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دل کو سکون روح کو آرام آ گیا نعمان شوق

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY