دل لیا جان لی نہیں جاتی

بیدم شاہ وارثی

دل لیا جان لی نہیں جاتی

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    دل لیا جان لی نہیں جاتی

    آپ کی دل لگی نہیں جاتی

    سب نے غربت میں مجھ کو چھوڑ دیا

    اک مری بیکسی نہیں جاتی

    کیے کہہ دوں کہ غیر سے ملئے

    ان کہی تو کہی نہیں جاتی

    خود کہانی فراق کی چھیڑی

    خود کہا بس سنی نہیں جاتی

    خشک دکھلاتی ہے زباں تلوار

    کیوں مرا خون پی نہیں جاتی

    لاکھوں ارمان دینے والوں سے

    ایک تسکین دی نہیں جاتی

    جان جاتی ہے میری جانے دو

    بات تو آپ کی نہیں جاتی

    تم کہو گے جو روؤں فرقت میں

    کہ مصیبت سہی نہیں جاتی

    اس کے ہوتے خودی سے پاک ہوں میں

    خوب ہے بے خودی نہیں جاتی

    پی تھی بیدمؔ ازل میں کیسی شراب

    آج تک بے خودی نہیں جاتی

    مآخذ:

    • کتاب : jigar parah armagaan bedam shaah (Pg. 63)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY