دل سے ترا خیال نہ جائے تو کیا کروں

حفیظ جالندھری

دل سے ترا خیال نہ جائے تو کیا کروں

حفیظ جالندھری

MORE BYحفیظ جالندھری

    دل سے ترا خیال نہ جائے تو کیا کروں

    میں کیا کروں کوئی نہ بتائے تو کیا کروں

    امید دل نشیں سہی دنیا حسیں سہی

    تیرے بغیر کچھ بھی نہ بھائے تو کیا کروں

    دل کو خدا کی یاد تلے بھی دبا چکا

    کم بخت پھر بھی چین نہ پائے تو کیا کروں

    دن ہو کہ رات ایک ملاقات کی ہے بات

    اتنی سی بات بھی نہ بن آئے تو کیا کروں

    جو کچھ بنا دیا ہے ترے انتظار نے!

    اب سوچتا ہوں تو ادھر آئے تو کیا کروں

    دیدہ وران بت کدہ اک مشورہ تو دو

    کعبہ جھلک یہاں بھی دکھائے تو کیا کروں

    اپنی نفی تو فلسفی جی قتل نفس ہے

    کہیے کوئی یہ جرم سجھائے تو کیا کروں

    یہ ہائے ہائے مضحکہ انگیز ہے تو ہو

    دل سے اٹھے زبان جلائے تو کیا کروں

    میں کیا کروں میں کیا کروں گردان بن گئی

    میں کیا کروں کوئی نہ بتائے تو کیا کروں

    اخبار سے مری خبر مرگ اے حفیظؔ

    میرا ہی دوست پڑھ کے سنائے تو کیا کروں

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Hafeez Jalandhari (Pg. 700)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY