دنیا کے ستم یاد نہ اپنی ہی وفا یاد

جگر مراد آبادی

دنیا کے ستم یاد نہ اپنی ہی وفا یاد

جگر مراد آبادی

MORE BYجگر مراد آبادی

    دنیا کے ستم یاد نہ اپنی ہی وفا یاد

    اب مجھ کو نہیں کچھ بھی محبت کے سوا یاد

    میں شکوہ بلب تھا مجھے یہ بھی نہ رہا یاد

    شاید کہ مرے بھولنے والے نے کیا یاد

    چھیڑا تھا جسے پہلے پہل تیری نظر نے

    اب تک ہے وہ اک نغمۂ بے ساز و صدا یاد

    جب کوئی حسیں ہوتا ہے سرگرم نوازش

    اس وقت وہ کچھ اور بھی آتے ہیں سوا یاد

    کیا جانئے کیا ہو گیا ارباب جنوں کو

    مرنے کی ادا یاد نہ جینے کی ادا یاد

    مدت ہوئی اک حادثۂ عشق کو لیکن

    اب تک ہے ترے دل کے دھڑکنے کی صدا یاد

    ہاں ہاں تجھے کیا کام مری شدت غم سے

    ہاں ہاں نہیں مجھ کو ترے دامن کی ہوا یاد

    میں ترک رہ و رسم جنوں کر ہی چکا تھا

    کیوں آ گئی ایسے میں تری لغزش پا یاد

    کیا لطف کہ میں اپنا پتہ آپ بتاؤں

    کیجے کوئی بھولی ہوئی خاص اپنی ادا یاد

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جگر مراد آبادی

    جگر مراد آبادی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جگر مراد آبادی

    جگر مراد آبادی

    نعمان شوق

    دنیا کے ستم یاد نہ اپنی ہی وفا یاد نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY