دنیا میں سراغ رہ دنیا نہیں ملتا

احمد مشتاق

دنیا میں سراغ رہ دنیا نہیں ملتا

احمد مشتاق

MORE BY احمد مشتاق

    دنیا میں سراغ رہ دنیا نہیں ملتا

    دریا میں اتر جائیں تو دریا نہیں ملتا

    باقی تو مکمل ہے تمنا کی عمارت

    اک گزرے ہوئے وقت کا شیشہ نہیں ملتا

    جاتے ہوئے ہر چیز یہیں چھوڑ گیا تھا

    لوٹا ہوں تو اک دھوپ کا ٹکڑا نہیں ملتا

    جو دل میں سمائے تھے وہ اب شامل دل ہیں

    اس آئنے میں عکس کسی کا نہیں ملتا

    تو نے ہی تو چاہا تھا کہ ملتا رہوں تجھ سے

    تیری یہی مرضی ہے تو اچھا نہیں ملتا

    دل میں تو دھڑکنے کی صدا بھی نہیں مشتاقؔ

    رستے میں ہے وہ بھیڑ کہ رستہ نہیں ملتا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دنیا میں سراغ رہ دنیا نہیں ملتا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY