دور ہوتے ہوئے قدموں کی خبر جاتی ہے

جاوید ناصر

دور ہوتے ہوئے قدموں کی خبر جاتی ہے

جاوید ناصر

MORE BYجاوید ناصر

    دور ہوتے ہوئے قدموں کی خبر جاتی ہے

    خشک پتے کو لیے گرد سفر جاتی ہے

    پاس آتے ہوئے لمحات پگھل جاتے ہیں

    اب تو ہر چیز دبے پاؤں گزر جاتی ہے

    رات آ جائے تو پھر تجھ کو پکاروں یارب

    میری آواز اجالے میں بکھر جاتی ہے

    دوستو تم سے گزارش ہے یہاں مت آؤ

    اس بڑے شہر میں تنہائی بھی مر جاتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY