ایک ہی شے تھی بہ انداز دگر مانگی تھی

اظہار اثر

ایک ہی شے تھی بہ انداز دگر مانگی تھی

اظہار اثر

MORE BY اظہار اثر

    ایک ہی شے تھی بہ انداز دگر مانگی تھی

    میں نے بینائی نہیں تجھ سے نظر مانگی تھی

    تو نے جھلسا دیا جلتا ہوا سورج دے کر

    ہم نے جینے کے لیے ایک سحر مانگی تھی

    ہم سفر کس کو کہیں شمس و قمر نے ہم سے

    منہ پہ ملنے کے لیے گرد سفر مانگی تھی

    کون آزر ہے جسے اپنا زیاں ہے مقصود

    کس نے پتھر کے لیے روح بشر مانگی تھی

    ایک لمحہ کوئی جی لے تو بڑی بات ہے یہ

    اس لیے ہم نے اثرؔ عمر شرر مانگی تھی

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    VIEW COMMENTS

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Favroite added successfully

    Favroite removed successfully